Protest jhelum 17

گوجرخان سانحہ مچھ کے شہداء کے ساتھ اظہار یکجہتی اور حکومتی بے حسی کے خلاف بطور احتجاج

گوجرخان:سانحہ مچھ کے شہداء کے ساتھ اظہار یکجہتی اور حکومتی بے حسی کے خلاف بطور احتجاج انجمن امامیہ اثناء عشریہ گوجرخان کے زیرانتظام مرکزی جامع مسجد و امام بارگاہ گوجرخان سے جی ٹی روڈ تک احتجاجی ریلی نکالی گئی مظاہرین نے جی ٹی روڈ پہ چند گھنٹوں کے لیے علامتی دھرنا دیا۔ دھرنا کی قیادت راجہ محسن صغیر بھٹی ایڈووکیٹ، سید کاظم علی نقوی، سید مقدر کاظمی، پروفیسر نسیم تقی ، سید اکبر شاہ، غلام قمر، زوار شاہ، فرحت حیدری، سید مروت نقوی، راجہ ذوالقرنین بھٹی ایڈووکیٹ، علامہ محمد حسین علوی، مولانا انوار جوادی، مولانا ظہورالحسن، سید اسد بوبی شاہ، سالار نوید حیدر، سید شبر ایڈووکیٹ، راجہ قاسم صغیر بھٹی، راجہ مصدق حسین، راجہ لیاقت، راجہ جابر،راجہ ظہیر حیدر، راجہ عمران مانی اور دیگر نے کی۔ دھرنا سے راجہ محسن صغیر بھٹی ایڈووکیٹ، بارایسوی ایشن کے صدر آغا نعمان منیر ایڈووکیٹ، مرکزی انجمن تاجراں کے صدر راجہ جواد، تاجر اتحاد گروپ کے صدر مرزا وقاص، سعادت نومی بٹ، تحریک لبیک کے ضلعی امیر رمضان چشتی، چوہدری احمد رضا ایڈووکیٹ، ن لیک کے سید ندیم عباس بخاری، پیپلزپارٹی کے راجہ عمران کامی اور سید شبر ایڈووکیٹ، تحریک انصاف کے شہزادہ خان، مزدور کسان پارٹی کے فہیم ذوالفقار، جماعت اسلامی کے امیر راجہ عمیر، ن لیگ کے چوہدری ضیافت، پروفیسر نسیم تقی جعفری، علامہ محمد حسین علوی، سید مقدر کاظمی، سید کاظم نقوی اور دیگر نے خطاب کیا۔ مقررین نے اپنے خطاب میں ہزارہ قبیلہ کی نسل کشی کی شدید الفاظ میں مذمت کی اور کہا کہ 6دن سے شہداء کے لواحقین 11 لاشے رکھے وزیراعظم کا انتظار کررہے ۔ وزیراعظم فوری کوئٹہ جائیں اور مظلومین کے دکھوں کا مدواء کریں۔ یہ صرف ہزارہ قبیلہ کا نہیں بلکہ پورے پاکستان کا مطالبہ ہے۔ ہزارہ قبیلہ کو تحفظ فراہم کیا جائے۔ گوجرخان میں تمام مسالک اور مکاتب کے افراد نے جمع ہو کر ثابت کردیا کہ ہم سب ایک ہیں اور کوئی تفریق نہیں ہے۔ ہزارہ قبیلہ مظلومیت کا استعارہ بن چکا ہے۔ ریاست اپنی آئینی ذمہ داری پوری کرنے وزیراعظم کے اس جملہ کہ انہیں بلیک میل نہ کیا جائے کی شدید مذمت کی اور کہا ایسے الفاظ زخموں پہ نمک چھڑکنے کے برابر ہیں دھرنا کی وجہ سے جی ٹی روڈ گھنٹوں بند رہی۔ جبکہ انجمن امامیہ کے جنرل سیکرٹری راجہ محسن صغیر بھٹی ایڈووکیٹ نے اعلان کیا کہ مرکزی امام بارگاہ کے سامنے احتجاجی کیمپ قائم رہے گا اور اگر ہزارہ قبیلہ کے مطالبات فوری تسلیم نہ کیے گئے تو مستقل طور جی ٹی روڈ کو بند کر دیں گے مظاہرین دھرنے کے بعد امام بارگاہ کے باہر قائم کردہ احتجاجی کیمپ میں واپس آ گئے