زیر علاج نوازشریف 71

مسلسل انجائنا کا درد، نوازشریف کو دل کا معمولی اٹیک ہوا

پنجاب انسٹی ٹیوٹ آف کارڈیالوجی کے سربراہ کو ایمرجنسی میں بلایا گیا،دل میں اینزائمز کی تعداد زیادہ پائی گئی ، ٹیسٹ ٹروپ ٹی اور ٹروپ آئی کی رپورٹ پازیٹو آگئی مسلم لیگ (ن) کے پارٹی ذرائع کا کہنا ہے کہ نوازشریف کو مسلسل انجائنا کے درد کی وجہ سے دل کا معمولی دورہ پڑ گیا ۔ذرائع کے مطابق نوازشریف کو گزشتہ روز انجائنا کا مسلسل شدید درد ہوا جس کے بعد معالجین نے نشاندہی کی کہ نواز شریف کو دل کا دورہ پڑنے کے خطرات لاحق ہیں۔پارٹی ذرائع کا کہنا ہے کہ دل کی یہ تکلیف طبی اصطلاح میں ‘این اسٹیمی’ کہلاتی ہے جس کے لیے پنجاب انسٹی ٹیوٹ آف کارڈیالوجی کے سربراہ کو ایمرجنسی میں بلایا گیا ہے، طبی جانچ کے نتیجے میں نواز شریف کے دل میں اینزائمز(پروٹین مالیکیولز)کی تعداد زیادہ پائی گئی۔سابق وزیراعظم کے دل کے ٹیسٹ ٹروپ ٹی اور ٹروپ آئی کی رپورٹ پازیٹو آ گئی جس کا مطلب ہے معمولی ہارٹ اٹیک ہوا ہے ، فوری طور پر خون پتلا کرنے والی دوائی کا استعمال شروع کرا دیا گیا۔ ہسپتال ذرائع کے مطابق نواز شریف کو پلیٹ لیٹس کی کمی جبکہ دوسری طرف دل کے عارضہ کا پرانا مسئلہ ہے، نواز شریف 18 سال سے دل کے عارضے میں مبتلا ہیں، سابق وزیراعظم 10 سال سے شوگر اور بلڈ پریشر کے عارضے میں بھی مبتلا ہیں۔ نواز شریف کی ایکو کارڈیو گرافی نارمل اور ای سی جی کی رپورٹ بہتر ہے۔گذشتہ روز میڈیکل بورڈ کی جانب سے نواز شریف کو انجائنا کی درد کی وجہ سے دل کے ٹیسٹ تجویز کیے گئے تھے۔ نواز شریف کی 2 دفعہ انجیو پلاسٹی اور 2 دفعہ اوپن ہارٹ سرجری بھی ہو چکی ہے، نوازشریف کو گردوں، کولیسٹرول اور جوڑوں کے درد کا بھی سامنا ہے۔ ان کے دو آپریشن ہو چکے ہیں۔دوسری جانب میاں نوازشریف کے پلیٹیلیٹس کی تعداد میں بہتری آئی ہے جس کے بعد ان کا پلیٹیلیٹس کاؤنٹ 30 ہزار ہوگیا ہے۔خیال رہے کہ اسپتال منتقلی سے قبل سابق وزیراعظم کے خون کے نمونوں میں پلیٹیلیٹس کی تعداد 16 ہزار رہ گئی تھی جو اسپتال منتقلی تک 12 ہزار اور پھر خطرناک حد تک گرکر 2 ہزار تک رہ گئی تھی۔ذرائع کے مطابق میاں نواز شریف کے پلیٹیلیٹس میں اضافہ ہونا شروع ہو گیا ہے اور انجائنا کی تکلیف کے حوالے سے بھی امراض دل کی ادویات شروع کر دی گئی ہیں۔علاوہ ازیں وزیر اعظم عمران خان کی ہدایت پرشوکت خانم اسپتال کے سی ای او ڈاکٹرفیصل سلطان کوسروسز اسپتال بھجوادیا گیا تاکہ وہ وزیراعظم کو میاں صاحب کی صحت سے متعلق لمحہ بہ لمحہ آگاہ رکھیں۔یاد رہے کہ لاہور ہائیکورٹ نے سابق وزیراعظم نوازشریف کی چوہدری شوگر ملز کیس میں طبی بنیادوں پر ضمانت منظور کی مگر ان کی العزیزیہ ریفرنس میں 7 سال قید کی سزا معطلی تک رہائی ناممکن ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں