22

ایپکس کمیٹی کا افغانستان میں بگڑتی انسانی صورتحال پراظہار تشویش

وزیر اعظم عمران خان کی زیر صدارت اپیکس کمیٹی کے اجلاس نے افغانستان میں بگڑتے انسانی بحران پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے پاکستان سے تربیت یافتہ افراد پڑوسی برادر ملک بھیجنے کا فیصلہ کیا۔ 

افغانستان کی صورتحال پر غور کے لیے جمعہ کومنعقد ہونے والے ایپکس کمیٹی کی اجلاس میں آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ، ڈی جی آئی ایس آئی، وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی، وزیر اطلاعات فواد چوہدری، وزیر داخلہ شیخ رشید ، مشیر تجارت عبدالرزاق داؤد اور مشیر قومی سلامتی ڈاکٹر معید یوسف بھی شریک ہوئے۔

اس موقع پر وزیراعظم نے متعلقہ حکام کو انسانی بحران روکنے کے لیے میڈیکل، فنانس اور آئی ٹی سے تعلق رکھںے والے تربیت یافتہ افراد افغانستان بھیجنے اور دیگر دوست ممالک کے ساتھ مل کر مسائل کا حل تلاش کرنے کی ہدایت کی۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ اقوام متحدہ کی جانب سے افغانستان کیلئے امداد کی اپیل کا خیرمقدم کرتےہیں۔ اعلامیہ میں کہا گیا ہے کہ عالمی برادری اور امدادی ادارے افغانستان کو امداد فراہم کریں۔

وزیراعظم نے افغانستان کی معاشی بحالی اور ترقی میں مدد کے لیے ریلوے، معدنیات، فارماسیوٹیکل اور میڈیا کے شعبوں میں تعاون بڑھانے کی بھی ہدایت کی۔

اعلامیہ کے مطابق وزراعظم کا کہنا تھا کہ پاکستان افغانستان کے انسانی بحران سے نمٹنے کے لیے افغان عوام کو ہر ممکن مدد فراہم کرنے کے لیے پرعزم ہے، افغانستان میں قیمتی جانوں کو بچایا جانا سب سے زیادہ ضروری ہے۔

اعلامیہ میں کہا گیا کہ پاکستان اس مشکل وقت میں افغانوں کو تنہا نہیں چھوڑے گا، امدادی ادارے افغانستان کو امداد فراہم کریں تاکہ افغانستان کو قیمتی جانوں کے نقصان اور معاشی بحران سے بچایا جا سکے۔

ایپکس کمیٹی کو انسانی امداد پر ہونے والی پیش رفت کے بارے میں بھی آگاہ کیا گیا جس میں غذائی اجناس، گندم، طبی سامان، موسم سرما میں پناہ گاہیں اور دیگر سامان شامل ہیں۔

اس سے قبل وزیراعظم عمران خان سے آرمی چیف کی ون آن ون ملاقات بھی ہوئی جس میں ملک کی مجموعی سیکیورٹی صورتحال پر بات چیت کی گئی۔


Print Friendly, PDF & Email