Angel flower 77

انصاف نہ ملا تو اپنی پوری فیملی سمیت خود کو آگ لگا لوں گا، والد فرشتہ

اسلام آباد میں دو برس قبل زیادتی کے بعد قتل ہونے والی بچی فرشتہ گل کے والد گل نبی نے کہا ہے کہ دو سال سے انصاف کیلئے دربدر پھر رہا ہوں مگر جھوٹی تسلیوں کے سوا کچھ حاصل نہیں ہواانصاف کے حصول کیلئے اپنی تمام جمع پونجی لگا چکا ہوں، اسلام کے نام پر لئے گئے ملک پاکستان میں غریب کیلئے کوئی انصاف نہیں ہے یہاں صرف پیسے والے کو انصاف ملتا ہے، اگر مجھے انصاف نہ ملا تو اپنی پوری فیملی سمیت خود کو آگ لگا لوں گا اور ہماری موت کے ذمہ دار ہمیں جھوٹی تسلیاں دینے والے ہونگے، نیشنل پریس کلب اسلام آباد میں زیادتی کے بعد قتل ہونے والی بچی فرشتہ کے والد گل نبی کا اپنی فیملی کے ہمراہ ہنگامی پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہنا تھا کہ دو برس قبل ہمارے ساتھ انتہائی ظلم ہوا اور ہماری بچی فرشتہ گل کو زیادتی کے بعد قتل کر دیا گیا مگر ہمیں اسکا پورا جسم بھی نہیں ملا، اللہ تعالیٰ تمام والدین کو ایسے دکھ سے محفوظ رکھے، ہماری کسی کیساتھ کوئی دشمنی نہیں ہے، پچھلے دو سالوں سے انصاف کیلئے دربدر پھر رہا ہوں، انصاف کے حصول کیلئے اپنی تمام جمع پونجی خرچ کر چکا ہوں، عدالت ، پولیس اور وکلاء کا ہمارے ساتھ رویہ انتہائی نامناسب ہے، بڑے بڑے عہدوں پر بیٹھے لوگوں کو غریب کے درد کا کوئی انصاف نہیں ہے، اسلام کے نام پر بننے والے ملک میں غریب کیلئے انصاف نام کی کوئی چیز نہیں ہے یہاں صرف پیسے والے کو انصاف ملتا ہے، کیا ان کے اپنے گھروں میں بچیاں نہیں ہیں، آئی جی نے ہم سے بڑے بڑے دعوے کئے اور تسلیاں دیں مگر وہ سب جھوٹ ثابت ہوئیں، عدالت کیس پر توجہ نہیں دی رہی ہے دو سال گزرنے کے بعد بھی انصاف ملنے کی دور دور تک کوئی امید ناہیں ہے، انہوں نے کہا کہ ملزم پولیس کی حراست میں ہے عدالت سے استدعا ہے کہ وہ ملزم کو پھانسی پر چڑھائے کیونکہ وہ اس سے قبل بھی چار پانچ دیگر بچوں کیساتھ بھی زیادتی کر چکا ہے، ایک تو ہماری بچی چلی گئی ہے اور ہمیں انصاف دینے کے بجائے الٹا ذلیل کیا جارہا ہے، انہوں نے انتہائی دکھی انداز میں کہا کہ اگر مجھے انصاف نہ ملا تو اپنی پوری فیملی سمیت خود کو آگ لگا لوں گا اور ہماری موت کے ذمہ دار ہمیں جھوٹی تسلیاں دینے والے ہونگے۔