Senator Shibli Faraz 16

سینیٹ الیکشن شفاف کرانے پر اپوزیشن کا احتجاج، شبلی فراز

پشاور۔وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات سینیٹر شبلی فراز نے کہا ہے کہ وزیراعظم عمران خان سینیٹ الیکشن میں ووٹ برائے فروخت کو ختم کرنے کیلئے پرعزم ہیں، سینیٹ الیکشن شفاف کرانے پر اپوزیشن کا احتجاج سمجھ سے باہر ہے،اپوزیشن پرانا پاکستان چاہتی ہے جہاں ضمیر بیچے جاتے ہیں۔ان خیالات کااظہار انہوں نے ہفتہ کے روز صوبائی الیکشن کمیشن میں سینیٹ انتخابات کیلئے کاغذات نامزدگی جمع کرانے کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ حکومت ایک جامع طریقہ کار وضع کرنے کی کوشش کر رہی ہے تاکہ کوئی بھی مستقبل میں انتخابات کے نتائج کی ساکھ اور غیر جانبداری پر انگلی اٹھانے کی جرات نہ کرسکے۔انہوں نے کہا کہ آزادانہ ، منصفانہ اور شفاف انتخابات جمہوریت کو پھلنے پھولنے اور جمہوری اداروں کو مضبوط بنانے کی اخلاقی بنیاد مہیا کرتے ہیں اور حکومت کی انتخابی اصلاحات سینیٹ انتخابات سمیت انتخابات کی ساکھ ، غیر جانبداری اور شفافیت کو یقینی بنانے میں مدد فراہم کرتی ہیں۔انہوں نے کہا کہ انتخابی اصلاحات لانے کیلئے حکومت کی کوششوں کی حمایت کرنے کے بجائے حزب اختلاف سینیٹ انتخابات میں کھلی رائے شماری کی مخالفت کرکے رکاوٹیں پیدا کررہی ہے جو انتخابی عمل کے دوران ہارس ٹریڈنگ اور بدعنوانی کی حوصلہ افزائی کرنے کے مترادف ہے۔انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی اور پی ایم ایل(ن) سمیت حزب اختلاف کی جماعتیں جنہوں نے سنہ 2008اور 2013کے انتخابات کے بعد 10سال تک ملک پر حکمرانی کی ، سینیٹ انتخابات کے دوران ہارس ٹریڈنگ ، بدعنوانی اور فروخت اور ووٹ کی خریداری کیلئے انتخابی اصلاحات کیلئے کوئی طریقہ کار تیار کرنے میں مکمل طور پر ناکام ہوچکی ہیں۔انہوں نے کہا کہ اپوزیشن ابھی بھی انتخابی اصلاحات کے خلاف کام کر رہی ہے جس کا مقصد سینیٹ انتخابات میں بدعنوانی ، ووٹوں کی خرید و فروخت اور ہارس ٹریڈنگ کے امکانات کو ختم کرنا ہے جس کا ماضی میں مشاہدہ کیا جا چکا ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت نے بدعنوانی اور ہارس ٹریڈنگ کے خاتمے کیلئے سینیٹ انتخابات کے دوران حزب اختلاف کواوپن بیلٹنگ کی پیش کش کی ہے لیکن اس اہم قانون سازی کے خلاف مخالفت کا ردعمل قابل افسوس ہے۔انہوں نے کہا کہ میں ایک سوال پوچھتا ہوں کہ پارلیمنٹ یا صوبائی اسمبلی میں چند ممبروں کی نمائندگی رکھنے والی سیاسی جماعت سینیٹ انتخابات میں کس طرح ایک سیٹ کو محفوظ بنائے گی ،اپوزیشن نے ماضی سے سبق نہیں لیا اور سینٹ الیکشن میں سیاسی وفاداری خریدنے کی کوشش کریں گے۔انہوں نے ایک سوال کیا کہ کیا لوگ اپنے بچوں کو وزیر اعظم عمران خان کی طرح رول ماڈل بنائیں گے یا چاہیں گے کہ وہ نواز شریف ہوں یا آصف زرداری بنیں ، ہر محب وطن پاکستانی ضرور چاہے گا کہ وہ اپنے بچوں کو وزیر اعظم عمران خان کے نقش قدم پر چلائے کیونکہ وہ واحد رہنما ہے جو ملک کو خوشحالی کے نئے عروج پر لے جانے کیلئے ایمانداری ، دیانتداری اور لگن کے اعلی درجے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ حکومتی انتخابی اصلاحات سے متوسط اور عام طبقے کیلئے انتخابات کے دروازے کھلیں گے اور وہ فیصلہ سازی کے عمل اور ملک کی معاشرتی و معاشی ترقی میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیں گے۔انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کے قانون ساز ان امیدواروں کی ہر ممکن مدد کریں گے جنھیں قیادت نے پارٹی کا ٹکٹ دیا ہے اور اس اعتماد کا اظہار کیا ہے کہ پی ٹی آئی ایوان بالا میں سب سے بڑی سیاسی جماعت بن کر ابھرے گی۔انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی عوام کی خدمت پر بھرپور یقین رکھتی ہے اور امیدواروں کی دیانت داری ، وفاداری ، عزم اور خدمات کو مدنظر رکھتے ہوئے میرٹ پر ٹکٹ سے نوازتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ کوئی بھی سیاسی کارکن یا رہنما جو پی ٹی آئی حکومت کے ایجنڈے ، منشور کی حمایت اور بدعنوانی کے خلاف جدوجہد کرتا ہے اس کا احترام کیا جائے گا اور انمول اثاثہ سمجھا جائے گا۔شبلی فراز نے خیبر پختونخوا حکومت کے یو نیورسل صحت کارڈ منصوبے کو سراہتے ہوئے کہا کہ یہ لاکھوں عوام کو مفت صحت کی سہولیات کی فراہمی کیلئے ایک سنگ میل ہے۔اس موقع پر صوبائی وزراء شوکت یوسف زئی ، تیمور سلیم جھگڑا اور وزیر اعلی کے معاون خصوصی کامران بنگش بھی موجود تھے۔