Municipal elections 66

الیکشن کمیشن آف پاکستان خیبر پختونخوا میں آئندہ بلدیاتی انتخابات کے لئے تیار

الیکشن کمیشن آف پاکستان خیبر پختونخوا میں آئندہ بلدیاتی انتخابات کے لئے تیار ہے، یہ بات صوبائی الیکشن کمشنر، خیبرپختونخوا شریف اللہ نے آج پشاور میں قومی ووٹرز ڈے کے موقع پر ایک تقریب سے مہمان خصوصی کی حیثیت سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ تقریب میں سابق صوبائی الیکشن کمشنر سندھ محمد یوسف خان خٹک، جائنٹ صوبائی الیکشن کمشنر، ہارون خان شینواری سمیت جملہ افسران نے شرکت کی۔
صوبائی الیکشن کمشنر نے کہا کہ ملک میں انتخابی عمل اور ووٹ کی اہمیت کو اجاگر کرنے کے لیے الیکشن کمیشن آف پاکستان نے ہر سال7 دسمبر کو ووٹروں کے قومی دن کے طور پر منانے کا فیصلہ کیا تا کہ قوم کو ووٹ کی اہمیت سے آگاہ کیا جاسکے اور زیادہ سے زیادہ لوگوں کی جمہوری عمل میں شرکت کو یقینی بنا یا جا سکے۔
انہوں نے مزید کہا کہ خیبرپختونخوا میں لوگوں میں ا نتخابات سے متعلق آگاہی اور آئندہ بلدیاتی انتخابات میں ووٹوں کی شرح بڑھانے کے لئے آگاہی مہم جاری ہے تا کہ عوام اور ووٹروں کو ووٹ کے اندراج اور حق رائے دہی کے استعمال کی اہمیت سے آگاہ کیا جائے،الیکشن کمیشن آف پاکستان نے خیبر پختونخوا سمیت ملک بھر میں انتخابی فہرستوں کی تجدید کا کام اکتوبر 2020 میں مکمل کیاجس میں ایسے تمام افراد جنہوں نے نادرا سے نئے شناختی کارڈ حاصل کیے ان کے ووٹوں کا اندراج ان کے گھر گھر جا کر تصدیق کی گئی جس کے مطابق خیبرپختونخوا میں رجسٹرڈ ووٹوں کی کل تعداد 1کروڑ 95لاکھ 33ہزار 9سو64ہے جس میں مرد ووٹروں کی تعداد 1کروڑ 10لاکھ76ہزار6سو30اور خواتین ووٹروں کی تعداد 84لاکھ57ہزار2سو1ہے، اس کے علاوہ 133 خواجہ سراء بھی بطور ووٹر رجسٹرڈ ہوئے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ مرد اور خواتین ووٹرز کے مابین تقریبا 26لاکھ کا فرق سامنے آیا ہے جس کو کم کرنے کے لئے الیکشن کمیشن نے نادرا اور سول سوسائٹی کے ساتھ مشترکہ طور پرWomen NIC & Voter Registration Campaign شروع کیا ہے۔جس کے تحت خواتین کے شناختی کارڈ بنوانے کے لئے نادرا کی جانب سے موبائیل رجسٹریشن وین فراہم کیا جارہا ہے، تمام سٹیک ہولڈرز سے اپیل کی کہ الیکشن کمیشن آف پاکستان کے ساتھ اس قومی فریضہ میں تعاون کریں تاکہ خیبرپختونخوا میں کوئی خاتون ووٹ کے اندراج سے محروم نہ رہے اور آنیوالے بلدیاتی عام انتخابات میں شرح ووٹ میں اضافہ ہو۔
اس سے پہلے جائنٹ صوبائی الیکشن کمشنر، خیبر پختونخوا ہارون شنواری نے اپنے خطاب میں بتایا کہ گزشتہ عام انتخابات میں ووٹ ڈالنے کی شرح 55فی صد رہی اور اس میں مزید اضافے کی گنجائش ہے، بلدیاتی انتخابات کی تیاریوں کے حوالہ سے متعلق کہاکہ صوبے کے 28اضلاع میں ویلیج اور نیبرہڈ کونسلوں کی حلقہ بندیاں مکمل ہوچکی ہے اورصوبائی حکومت کیجانب سے ڈویژنل ہیڈکوارٹر اضلاع جن میں پشاور، مردان، سوات، ایبٹ آباد، کوہاٹ، بنوں اور ڈی آئی خان شامل ہیں، میں سٹی کونسل کے قیام سے متعلق قانونی تقاضے پوری ہوتے ہی وہاں بھی حلقہ بندیوں کاکام شروع کیا جائیگا، انتخابی فہرستوں کو اپڈیٹ، سمیت پولنگ سٹاف کی تقرریوں اور انتخابی مواد کی تیاری آخری مراحل میں ہیں۔جائنٹ صوبائی الیکشن کمشنر نے مزید بتایا کہ ووٹر آگاہی مہم کے سلسلے میں پشاور کے بڑے تعلیمی اداروں میں سیشن منعقد کئے گئے جس میں 6ہزار سے طلبہ و طالبات کو ووٹ کی اہمیت کے بالخصوص محروم طبقات کے بطور ووٹر اندراج اور شرح ووٹ بڑھانے سے متعلق تربیت دی گئی اور موقع پر تقریبا 500طلبہ و طالبات رضاکاررجسٹرڈ ہوئے اور ان کو تربیت دی گئی، محروم طبقات کے انتخابات سے متعلق مسائل حل کرنے کیلئے خیبر پختونخوا کا جینڈر اینڈ ڈسیبلٹی گروپ بھی فعال کردار ادا کر رہا ہے۔
ڈائریکٹر الیکشن خوشحال زادہ نے بھی اسی دن کی مناسبت سے خطاب کیا۔ اور ووٹ کی اہمیت پر روشنی ڈالی اور میڈیا، سول سوسائٹی اور تمام اسٹیک ہولڈرز سے اپیل کی کہ وہ عوام میں ووٹر آگاہی مہم میں الیکشن کمیشن کا ساتھ دیں۔شرکاء کو اس موقع پر ووٹر آگاہی مہم کے حوالہ سے خصوصی ویڈیو بھی دکھائی گئی۔
یاد رہے کہ عوام میں ووٹ کی اہمیت اُجاگر کرنے کے سلسلے میں خیبر پختونخوا کے تمام اضلاع میں قومی ووٹرز ڈے منا یا گیا پشاور کی سطح کی بڑی تقریب ریجنل الیکشن کمشنر پشاور فضل حکیم کی زیر صدارت اپنے دفتر میں منعقد ہوئی جس میں ڈسٹرکٹ الیکشن کمشنر اور دیگر افسران نے شرکت کی۔
واضح رہے کہ Covid-19کی وجہ سے تمام تقاریب کو سادہ رکھا گیااو رصرف میڈیاکو کوریج کی درخواست کی گئی۔