146

مری ایک تحصیل دو قانون

By

مری ایک تحصیل دو قانون۔سرکاری گیسٹ ہاوسز آباد۔پرائیویٹ ہوٹل سیل۔ملکہ کوہسار بیوروکریٹس اور حکومتی ارباب و اختیار کےلیئے جنت سیاحوں اور مقامی لوگوں کےلیئے جہنم۔کرونا بیوروکریٹس اور حکومتی شخصیات سے دور مقامی افراد اور سیاحوں کےلیئے خطرہ قرار ۔رکن قومی اسمبلی پروفیسر صداقت علی عباسی سے بھی کاروباری طبقہ مایوسی لے آیا۔گذشتہ دن
اسسٹنٹ کمشنر مری زاہد حسین نے کاروائی کرتے ہوۓ ہوٹل اسلام آباد پرائیم کو سیل کر دیا۔۔سیاحوں کو سیاحوں کر جرمانے کرتے ہوئے واپسی کی راہ دیکھائی۔بیورو کریٹس اور حکومتی ارباب اختیار کو فیلمیز سمیت کھلی چھٹی یاد رہے کہ کرونا وائرس کی وباء کہ باعث مری میں سیاحت پر پاپندی ہونے کے باوجود چوری چھپے کمرے دینے والے ہوٹل کو سیل کر دیا گیا
مذید ہوٹلوں پر چھاپے مارنے کا سلسلہ جاری۔
اے سی زاہد حسین نے مذید بتایا کہ چھپ چھپ کر آنے والے سیاحوں کو پکڑ کر بھاری جرمانے ادا کرنے کے بعد واپس بھیجا جا رہا ہے اور مری میں کورونا کیسز تیزی سے بڑھ رہے ہیں تحصیل ایڈمنسٹریشن کی جانب سے اسلیئے عوام کو گھروں میں رہنے کی اپیل کی۔جبکہ دوسری طرف بیوروکریٹس اور حکومتی شخصیات کی لگژری گاڑیاں مری کے مختلف پر فضاءمقامات پر لطف انداز ہوتی نظر آتی ہیں اور دو دن سے مختلف چینلز پر رپورٹ بھی ہو رہی ہیں اور قبل ازیں ھفتہ کے دن مری کے کاروباری افراد کی طرف سے بنائی گئی متحدہ ایکشن کمیٹی کے ارکان نے اسلام آباد میں آباد مری کہ رکن قومی اسمبلی پروفیسر صداقت علی عباسی سے لاک ڈاون کو ایس او پیز کے تحت کھولنے کے حوالہ سے ملاقات کی جس میں کاروباری طبقہ کو مایوسی ہی ملی
یاد رہے کہ مری کے ایس ایچ او سمیت تریٹ چوکی دو بنکس اور تحصیل ہیڈ کواٹر ہسپتال کے ملازمین میں کرونا وائرس کا پایا گیا جس کے بعد مری انتظامیہ حرکت میں آئی اور وی وی آئی پیز کی فیملیز کے بجاۓ عام ہوٹلز سیل کرنے سیاحوں کو جرمانے شروع کر دیئے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں