Numbli murree newsNumbli murree news 73

مری یونین کونسل نمبل ڈنہ آوائن کے رہائشی معصوم بیٹوں کے ہمراہ مری میڈیا کو اس پر ہونے والے ظلم کی داستان سناتے ہوئے

مری یونین کونسل نمبل ڈنہ آوائن کے رہائشی محمدظہور نے اپنی زوجہ شیرینہ بی بی اور اپنے معصوم بیٹوں کے ہمراہ مری میڈیا کو اس پر ہونے والے ظلم کی داستان سناتے ہوئے بتایا کہ اس کی آبائی جائیداد ڈنہ آوائن میں ہے جس میں اس نے دوکمروں کا گھر تعمیر کیا جس کوچند بااثر افراد نے پولیس چوکی لوئر بازار مری کے اہلکارشکیل کیانی اوردیگر اہلکاروں کی مدد سے میر ے اور میرے بچوں کے آشایانہ کو گرا کر ہمیں بے گھر کردیا ہے مذکورہ بااثر اشخاص محمد الیاس،محمد سعید،عاطف،ثاقب،شیزان نے دیگر 12 افراد کے ساتھ ہم پر اچانک حملہ کردیا اور شدید فائرنگ کرتے رہے اور ہمیں گھر سے نکال کر ہمارے مکان کو گرا دیا مجھے،میری بیوی اور بیٹوں کو شدید تشدد کانشانہ بناتے ہوئے ہمیں سڑک پر گھسیٹا گیا جس سے میرا ہاتھ ٹوٹ گیا متاثرہ شخص نے بتایا کہ وہ ایک غریب انسان ہے اور وہ دولت منداور بااثر افراد کا مقابلہ نہیں کرسکتاجبکہ لوئربازار پولیس چوکی کا اہلکار بھی اس کی مدد کررہے ہیں ہمیں مری پولیس سے انصاف نہیں مل رہا پولیس چوکی کے اہلکارہمیں گاڑی میں بٹھاکر چوکی پر لے آئے ہم سمجھ رہے تھے کہ یہ ہماری مددکرینگے لیکن حملہ کونے والوں کیخلاف مقدمہ درج کرنے اورمیڈیکل کروانے کے بجائے ہمیں ایک رات اور ایک دن چوکی میں بندکئے رکھا پولیس اہلکار شکیل کیانی بااثر افرادسے ملا ہوا ہے،متاثرہ شخص نے بتایا کہ پولیس کی اس زیادتی پر ہم نے کورٹ سے رجوع کیا عدالت کے حکم پر ڈی ایچ کیو ہسپتال راولپنڈی میں ہمارا میڈیکل کیاگیا لیکن ہماری غریبی وہاں بھی آڑے آگئی اور بااثر افراد نے وہاں بھی اپنااثرورسوخ استعمال کرلیا متاثرہ شخص محمد ظہور،اسکی اہلیہ نے چیف جسٹس آف پاکستان،وزیراعظم پاکستان،وزیراعلیٰ پنجاب،آر پی او راولپنڈی،سی پی او راولپنڈی،اے ایس پی مری اور دیگر اعلیٰ حکام سے ان کو انصاف فراہم کرنے اور ذمہ داران کیخلاف سخت ایکشن لینے کی اپیل کی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں