murree news-03.03.2020 102

مری شہر میں چوہوں اور کتوں کی بھر مار

مری شہر میں چوہوں اور کتوں کی بھر مار مری انتظامیہ ستاتو پی کر سو گئی ہے جس کے باعث مری شہر کی مقامی آبادی چوہوں اور کتوں کے نرغے میں ہے سرشام شہر میں کتے اور چوہے مٹر گشت شروع کر دیتے ہیں کتوں نے نہ صرف اب تک مری کی مقامی آبادی کے متعدد جانور مار ڈالے ہیں بلکہ کتوں کے کاٹنے سے متعدد افراد زخمی ہونے کے ساتھ دو افراد جان سے ہاتھ دھو بیٹے ہیں جبکہ چوہوں کے کی بھی شہر میں بہتات ہے جس سے شہر میں طاعون کی بیماری پھیلنے کا خدشہ دن بدن بڑھتا جارہے طاعون کی وباء کے خوف سے مری شہر کی فلاحی تنظیم انجمن فلاح معاشرہ کی طرف سے پچاس ہزار روپے کی چوہے مار گولیاں بھی اپنے طور پر چوہوں کے خاتمے کے لیے شہر بھر کے مختلف علاقوں میں پھینکی جاچکی ہیں اس کے باوجود چوہوں میں کمی واقعہ نہیں ہوئی حال ہی میں مری کی سیاسی سماجی شخصیت نور محمد کان کے فرزند نعمان خان کی طرف سے بھی دس ہزار روپے کی چوہے مار گولیاں چوہوہوں کو مارنے کے لیے مانگوئی گی ہیں اس کے لیکن میونسپل کاپوریشن مریکے ذمہ کی طرف سے تاحال مری شہر کو کتوں اور چوہوں کے خاتمے کے لیے کسی۹ بھی قسم کے اقدامات نہیں کیے جارہے شاہد یہی وجہ ہے کتوں کے کاٹنے سے اب تک متعدد جانور سمیت دوافراد جان کی بازی ہار گے ہیں جبکہ شہر کے گلی کوچوں میں چوہوں نے مقامی آبادی کا جینا حرام کر رکھا ہے جس کے باعث طاعون کی وباء پھیلنے کا خدشہ پیدا ہو گیا ہے لیکن میونسپل کارپوریشن مری خواب خرگوش میں مدہوش ہے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں