Murree Tourism 34

وطن عزیز کا اہم ترین سیاحتی مقام تباہی

مری: وطن عزیز کا اہم ترین سیاحتی مقام تباہی کی جانب گامزن سرسبز پہاڑوں کوکاٹنے کا سلسلہ تیزی سے جاری کوئی پوچھنے والا بھی نہیں ایسامحسوس ہوتا ہے یہاں جنگل کاقانون ہے چند دن قبل وزیر اعظم کی عوام سے براہ راست گفتگو میں کی ایک سماجی شخصیت شاہد عباسی نے مری کو کنکریٹ کا پہاڑبنائے جانے، پہاڑوں کوہیوی مشینری لگاکر ختم کرنے،بڑے پیمانے پر پتھروں کی نکاسی اور ٹنوں کے حساب سے مٹی جنگلات میں پھینکنے کے بارے میں شکایت کی تھی جس پر وزیراعظم نے واضع حکم دیاتھا کہ اس سلسلے کوفوری روکا جائے اورجنگلات سے مٹی کو ہٹایاجائے لیکن وزیراعظم کے احکامات کویکسر ہوامیں اڑادیاگیا نہ توپہاڑوں کی کٹائی اور نہ ہی کثیرالمنزلہ عمارتوں کی تعمیر کا سلسلہ تاحال رک سکا ہے عیدالطفر کی تعطیلات کی وجہ سے تین دنوں تک یہ سلسلہ رکا ہے جو اب جلد شروع ہوجائیگا کیونکہ ہیوی مشینری موقع پر موجود ہے کئی مقامات پر پردے لگاکرکام کیاجارہا ہے خصوصی طورپر کشمیرپوائنٹ،ویوفورتھ روڈ،بنک روڈ،ہال روڈ،جھیکاگلی روڈ اور دیگر درجنوں مقامات پر یہ سلسلہ جاری ہے عوامی حلقوں اور مری سے پیارکرنے والوں کاکہنا ہے کہ ایک طرف تو وزیراعظم سیاحت کے فروغ کیلئے اقدامات کررہے ہیں جبکہ مری جیسے اہم ترین سیاحتی مقام کو تباہ کیاجارہا انہوں نے وزیراعظم سے مطالبہ کیا ہے کہ اس سلسلے کو فوری روکا جائے اور ذمہ داران اور اپنے فرائض سے غفلت برتنے والوں کیخلاف سخت ترین کاروائی عمل میں لائی جائے اورکسی سرکاری ایجنسی سے اسکی تمام تفصیلات لیکر سخت ترین سزائیں دی جائے ورنہ ملکہ کوہسارمری اپنی سیاحتی اہمیت کھودی گئی اورسیاح یہاں کارخ کرنا چھوڑ دینگے۔