supreme-court-featured- 20

سپریم کورٹ کی طرف سے بلدیاتی نمائندوں کی بحالی

مری(عتیق عباسی سے)سپریم کورٹ کی طرف سے بلدیاتی نمائندوں کی بحالی میونسپل کارپوریشن مری کے بلدیاتی نمائندگان پر سوالیہ نشان اٹھ گیا۔جب انتخاب ہوۓ اس وقت مری کی متعدد یونین کونسلز پر مشتمل میونسپل کارپوریشن بنائی گئی تھی جو بعد ازاں ختم کر کہ میونسپل کمیٹی مری بحال کر دی گئی۔جس کے بعد مسیاڑی۔روات دریا گلی۔سے منتخب چیئرمینز۔وائس چیئرمینز۔کونسلرز کی پوزیشن مشکوک ہوگئی کیونکہ سردار ساجد رشید۔اصغر عباسی۔امتیاز عباسی کو ان کی میونسپل کارپوریشن کے بیلٹ پیپرز پر مہر لگا کر عوام الناس نے منتخب کیا تھا جبکہ باقی ماندہ یونین کونسلز میں حلقہ بندیوں کے اعتراضات کی بنا پر انتخابات کا انعقاد ہی ممکن نہ ہو سکا یوں میونسپل کارپوریشن مری کےپہلے پہلے چیئرمینز وائس چیئرمینز اور انکے ساتھ کے تمام کونسلرز اب سپریم کورٹ کی طرف سے چند دن قبل بلدیاتی نمائندگان کی بحالی کے بعد اپنی مشکوک اور سوالیہ نشان اٹھنے والی پوزیشن پر کھڑے ہیں عوام الناس کے مطابق اگر بلدیاتی نمائندگان بحال ہوۓ ہیں تو پھر مری میونسپل
کارپوریشن کا سٹیٹس رکھتی ہے یا پھر میونسپل کمیٹی کا دوسری طرف تحریک انصاف نے مری سٹی کی تنظیم کو بھی مری میونسپل کارپوریشن کی تنظیم کا نام دیکر ٹوٹل پورا کر رکھا ہے اس حوالہ سے الیکشن کمیشن اور قانونی ماہرین کی راۓ دلچسپ حثیت رکھے گی