Water drop drop 23

پانی کی بوند بوند کرترس،،،

مری محکمہ پبلک ہیلتھ مری کی کارستانیاں اور کرپشن تبدیلی کے دعوے کرنے والے دیکھیں کہ مری کے عوام پانی کی بوند بوند کرترس گئے ہیں،محکمے میں کرپشن کے ریکارڈ سامنے آنے لگے اہلیان علاقہ کاحکومت پنجاب،ایم این اے،ایم پی اے اور محکمہ اینٹی کرپشن سے فوری نوٹس لینے کامطالبہ تفصیلات کے مطابق،محلہ شوالہ واٹر سپلائی سکیم پر محکمہ پبلک ہیلتھ نے نئی ناقص اور ناکارہ موٹریں اور پمپ لگادئیے 80 لاکھ روپے کی لاگت سے لگائے گئے یہ غیر معیاری،ناقص اورلوکل بنائے گئے پمپ اور موٹریں چند دن میں ہی خراب ہوگئے ہیں اور اہلیان علاقہ پانی کی بوند بوندکوترس گئے ہیں باخبرذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ مذکورہ واٹرسپلائی سکیم کیلئے حکومت پنجاب نے 80 لاکھ روپے کے فنڈزجاری کئے تھے جس کے بعد اس سکیم کی مختلف سٹیجوں پرملی بھگت سے ناقص اورناکارہ موٹریں اور پمپ لگائے گئے جو ایک ہفتہ بھی نہ چل سکے اور خراب ہوگئے معلوم ہوا ہے کہ ان میں وہ پاور ہی نہیں جو پانی کوپمپ کرکے ٹینکوں تک پہنچا سکیں متعلقہ عملے نے تحریری طور پر متعلقہ افسران کو کہا ہے کہ ان موٹروں اور پمپوں کو واپس کرکے:کے ایس بی:کے پمپ اور سائمن کی موٹریں لگائی جائیں بصورت دیگر واٹرسپلائی کا نظام کسی صورت درست نہیں ہوسکتا عوامی حلقوں نے وزیراعلیٰ پنجاب،ممبر قومی اسمبلی صداقت علی عباسی،ممبر پنجاب اسمبلی میجر(ر)لطاسب ستی،کمشنر و ڈپٹی کمشنر راولپنڈی اور محکمہ اینٹی کرپشن راولپنڈی ڈویثرن سے مطالبہ کیا ہے کہ اس سلسلے میں فوری انکوائری کروائی جائے اور ذمہ داران کیخلاف سخت قانونی کاروائی عمل میں لائی جائے جن کی غفلت،لاپرواہی اور کرپشن سے اہلیان علاقہ کو پانی کی شدیدقلت کا سامنا کرنا پڑرہا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں