Massive construction 24

ملکہ کوہسار کے سرسبز و شاداب پہاڑ کنکڑیٹ کے پہاڑوں میں تبدیل

ملکہ کوہسار مری میں ملکیتی زمین رکھنے والے تعمیراتی بائی لاز نہ ہونے پر مہینوں کی تعمیر دنوں میں کرنے لگے۔ملکہ کوہسار کے سرسبز و شاداب پہاڑ کنکڑیٹ کے پہاڑوں میں تبدیل۔تحریک انصاف کے بااثر اور ایم این اے کے قریبی افراد کےلیئے ملکہ کوہسار کی تعمیرات سونے کی کان بن گئی۔وزیر اعلی معائنہ کمیشن اور اینٹی کرپشن کے دورے بے سود نکلے۔مری میں اپنی ذاتی جائیداد رکھنے والے افراد کےلیئے تعمیرات کا ٹھیکہ حکومتی جماعت کے اس رکن کو دیا جا سکتا ہے جس کے مراسم مارگلہ فارم ہاوس اسلام آباد میں تشریف فرما ایم این اے سے مضبوط ہوں اگر ایسا ممکن نہ ہو تو تحصیل میونسپل ایڈمنسٹریشن کو حرکت میں لایا جاتا ہے۔جس پر مری کے عوامی حلقوں کا کہنا ہے کہ مری میں زمین رکھنے والے افراد کو قانونی طور پر اجازت دی جاۓ تاکہ مہینوں کا کام دنوں میں نہ ہو بلکہ مضبوط تعمیرات سے حادثات کا خطرہ کم کیا جا سکتا ہے لیکن موجودہ تعمیرات کسی وقت بھی کسی بڑے سانحہ کو جنم دے سکتی ہیں جسکی ذمہداری کوئی اپنے سر نہیں لے گا اسوقت ضلع سے لیکر پنجاب حکومت تک انکوائریاں اور عدالت عالیہ نوٹس لے گی شہر کی بے ہنگم تعمیرات دیکھ کر سیاح بھی دوسرے سیاحتی مقامات کو ترجیحی دیتے نظر آتے ہیں مقامی افراد کے ساتھ ساتھ سیاح بھی مری کے سر سبز و شاداب پہاڑ کنکڑیٹ کے پہاڑوں میں بدلتے دیکھ کر کانوں کو ہاتھ لگا کر یہ کہتے سننے گئے کہ مری میں انتظامیہ و قانون نام کی کوئی چیز نہیں اور مری میں لاک ڈاون کے باعث ہوٹل اینجٹس گھروں تک محدود جب کہ ڈیل مافیا اور تعمیرات مافیا ہر جگہ نظر آتے ہیں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں