35

ٹھیکدار کو کھلی چھٹی

سوہاوہ ۔احسن وحید ۔یاسر فہمید ۔رضا اعوان سے ۔ضلعی و تحصیل انتظامیہ ٹھیکدار کے سامنے بے بس متعدد بار نشاندہی کے باوجود نذرانے لینے والوں نے ٹھیکدار کو کھلی چھٹی دے رکھی ہے تفصیلات کے مطابق سوہاوہ سروس روڈ کا کام تیزی سے جاری ہے جس میں ناقص کام کی نشاندہی کے باوجود انتظامیہ ٹس سے مس نہ ہو رہی ہے انتظامیہ کو اس سے قبل بھی نشاندہی کی تو انتظامیہ کا کہنا تھا کہ ٹھیکدار کو تا حال رقم کی ادائیگی نہیں کی گئی کام مکمل ہونے پر جو خامیاں رہ جائیگی ان کو ٹھیک کرنے کے بعد رقم کی ادائیگی کی جا ئیگی جبکہ متعدد بار ٹھیکے کے متعلق دریافت کرنے کے باوجود میڈیا کو ٹھیکے کی تفصیل نہ دی جا رہی ہیں جبکہ میونسپل کمیٹی میں گزشتہ دس سالوں سے متعدد سیٹیں خالی ہونے کی وجہ سے ایک ایک آفیسر کے پاس دو سے تین اضافی چارج موجود ہیں جس کی وجہ سے میونسپل کمیٹی میں کرپشن عروج پر ہے جبکہ ایک لمبے عرصے سے میونسپل کمیٹی سوہاوہ کا آڈٹ بھی نہ ہوا ہے ۔با وثوق ذرائع کا کہنا ہے کہ سروس روڈ کی تعمیر کے لیے باقاعدہ بیڈ بچھا کر ٹائلز لگائی جاتی ہیں لیکن ٹھیکدار صرف ریت کی ایک تہہ ڈال کر ٹائلز لگا رہا ہے جبکہ میلاد چوک سے نیشنل بنک تک تعمیر ہونے والی سروس روڈ جگہ جگہ سے بیٹھ گئی ہے جس کی دوران تعمیر نشاندہی بھی کی گئی لیکن ٹھیکدار سے نذرانہ لینے والوں نے اعلی افسران کو یہ کہہ کر ماموں بنایا ہوا ہے کہ ٹھیکدار کا کام جاری ہے ابھی ادائیگی نہ کی گئی ہے کام مکمل ہونے پر کام کی معیار کو چیک کر کے بل پاس کیا جائیگا اس منطق کو دفتروں میں بیٹھے افسران تو شاید سمجھ جائیں لیکن عوامی حلقے ناقص کام پر انتظامیہ کی خاموشی پر حیرت کدہ ہیں عوامی حلقوں کا کہنا ہے کہ سابقہ دور حکومت میں بھی ٹھیکداروں سے ملی بھگت کر کے میونسپل کمیٹی کے کرپٹ افسران سرکاری خزانے کو کروڑوں روپے کا چونا لگا چکے ہیں جس کا تا حال آڈٹ نہ ہوا اسی طرح اب بھی ایسے کرپٹ عناصر اس حکومت میں بھی آڈٹ نہ ہونے کا ناجائز فائدہ اٹھا رہی ہے اب دیکھنا یہ ہے کہ بل پاس ہونے کے بعد انکوائریوں کے نام پر فائل ردی کی ٹوکری میں جائیگی یا اس بار لوٹنے والے کیفر کردار کو پہنچے گے