Senate Standing Committee 12

سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے مواصلات کی ذیلی کمیٹی کا اجلاس

اسلام آباد سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے مواصلات کی ذیلی کمیٹی کا اجلاس کنونیئر کمیٹی سینیٹر میر محمد یوسف بادینی کی سربراہی میں پارلیمنٹ ہاؤس میں منعقد ہوا۔ ذیلی کمیٹی کے اجلاس میں ملتان، سکھر موٹروے پر سروس ایریازبنانے اور ایم- 5پر بغیر بڈنگ کے عمل پی ایس او کو سروس ایریا ز دینے کے معاملات زیر غور آئے۔
ذیلی کمیٹی کو ملتان، سکھر موٹروے پر سروس ایریا بنانے کے حوالے سے تفصیلی آگاہ کیا گیا۔ کمیٹی کو بتایاگیا کہ ایم 5پر 6 سروس ایریا بننے ہیں جن میں سے 3ایوارڈ ہو چکے ہیں۔ قطب الدین شاہ سروس ایریا، اعظم پور سروس ایریا اور اُوچھ شریف سروس ایریا اس کی لیز دس سال کی ہو گی۔ کمیٹی کو بتایا گیا کہ وہ آئل کمپنی جو ایس ای سی پی اور اوگرا سے لائسنس حاصل کیا ہو گا وہ سروس ایریا حاصل کر سکتی ہے اور دس سال کا تجربہ بھی ضروری ہے۔ کمیٹی کو بتایا گیا کہ ان تینوں ایریاز کیلئے پانچ پانچ کمپنیوں نے بولی میں حصہ لیا تھا اور سب سے زیادہ بولی والی کمپنی کو ایوارڈ کئے گئے ہیں۔ بولی میں اٹک پیٹرولیم کمپنی، گو، شل پاکستان، تاج کارپوریشن اور خیبر مہران پیٹرولیم شامل تھیں۔
ایم 5-سکھر -ملتان موٹروے پر بغیر ٹینڈر کے پی ایس او کو سائیٹس دینے کے معاملے کا تفصیل سے جائزہ لیا گیا۔ کمیٹی کو بتایا گیا کہ عدالت نے این ایچ اے کو ہدایت کی تھی کہ پی ایس او کے ساتھ معاملات کو افہام و تفہیم سے حل کیا جائے اور وہی جگہیں اُسی ریٹ پر دی جائیں۔جس پر کنونیئر کمیٹی نے سینیٹر میر محمد یوسف بادینی کہا کہ کمیٹی نے گزشتہ اجلاس میں بھی سفارش کی تھی کہ مارکیٹ کے ریٹ کے مطابق پی ایس او کو آفر پیش کی جائے اوپن بیڈنگ پر کوئی اعتراض نہیں ہے۔ کمیٹی نے آئندہ اجلاس میں پی ایس او کے موقف کو سننے کیلئے طلب کر لیا۔
ذیلی کمیٹی کے آج کے اجلاس میں ڈاکٹر اشوک کمار کے علاوہ ایڈیشنل سیکرٹری وزارت مواصلات، ممبر این ایچ اے نے شرکت کی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں