CDA-Islamabad 66

چیئرمین سی ڈی اے نے ادارے کے انفارمیشن ٹیکنالوجی (آئی ٹی) ڈائریکٹوریٹ کے افسران اور عملے کی خراب کارکردگی

چیئرمین سی ڈی اے نے ادارے کے انفارمیشن ٹیکنالوجی (آئی ٹی) ڈائریکٹوریٹ کے افسران اور عملے کی خراب کارکردگی،پیشہ ورانہ امور کی انجام دہی میں غفلت اور کام میں عدم دلچسپی پر افسران اور عملے سے جواب طلب کر لیا۔ اس ضمن میں سی ڈی اے کے ممبر ایڈمنسٹریشن نے مراسلہ جاری کر دیا ہے جس میں آئی ٹی ڈائریکٹوریٹ کے افسران اور ملازمین کی خراب کارکردگی پر چیئرمین سی ڈی اے کی طرف سے نا پسندیدگی کے اظہار کی روشنی میں ان کو تین دن کے اندر جواب جمع کرانیکی ہدایت کی گئی ہے۔ مراسلے کے مطابق آئی ٹی ڈائریکٹوریٹ ادارے میں جدید ٹیکنالوجی کے استعمال اور اپنی بنیادی ذمہ داریاں ادا کرنے میں ناکام رہا ہے جس سے نہ صرف ادارے کی کارکردگی متاثر ہو رہی ہے بلکہ موئثر مانیٹرنگ اور جدید سسٹم کے فعال نہ ہونے کے باعث دفتری کاموں کی انجام دہی میں بھی تاخیر ہو رہی ہے۔
اس ضمن میں آئی ٹی ڈائریکٹوریٹ کے تمام افسران اور ملازمین کو ہدایت کی گئی ہے کہ وہ اپنی کارکردگی اور روزانہ کی بنیاد پر کئے جانے والے کام کی تفصیلی رپورٹ بھی انفرادی طور پر تین دن کے اندر جمع کرائیں جس سے یہ اندازہ لگایا جا سکے کہ افسران اور ملازمین کی کارکردگی میں کہاں کمی آئی ہے۔ علاوہ ازیں افسران اور ملازمین سے اس بات کی بھی وضاحت طلب کی گئی ہے کہ انہوں نے ادارے میں جدید ٹیکنالوجی کے نفاذ کے لیے کون سی اصلاحات کی ہیں جس سے ادارے کی کارکردگی میں اضافہ ہوا ہو۔ ان افسران اور ملازمین کو سختی سے تاکید کی گئی ہے کہ وہ اپنی وضاحت تین دن کے اندر اندر ممبر ایڈمنسٹریشن کے پاس جمع کرائیں۔ وضاحت موصول نہ ہونے پر متعلقہ افسران اور ملازمین کے خلاف سخت قانونی اور انضباطی کاروائی عمل میں لائی جائے گی۔
دریں اثناء چیئرمین سی ڈی اے نے ادارے کے مختلف شعبوں بالخصوص اسٹیٹ ونگ، پلاننگ ونگ،بلڈنگ کنڑول، لینڈ و بحالیات، ون ونڈو آپریشن ڈائریکٹوریٹ، لاء ونگ اور ایچ آر ڈی ڈائریکٹوریٹس میں سرکاری ریکارڈ، پرسنل فائلوں اور دیگر متعلقہ ریکارڈ اور کاغذات کی گمشدگی کے باعث مختلف فورم پر پیدا ہونے والی نا خوشگوار صورتحال کے ضمن میں ہدایت کی ہے کہ آئندہ ریکارڈ کی گمشدگی اور فائلوں کی عدم دستیابی کی ذمہ داری متعلقہ ڈائریکٹر، ڈپٹی ڈائریکٹر، اسسٹنٹ ڈائریکٹر اور متعلقہ اسسٹنٹ پر عائد ہو گی۔ اس سلسلے میں سی ڈی اے کے ممبر ایڈمنسٹریشن نے مراسلہ جاری کر دیا ہے جس کے تحت متعلقہ افسران کو ہدایت کی گئی ہے کہ وہ ریکارڈ، سرکاری دستاویزات اور فائلوں کی حفاظت کو یقینی بنائیں۔ مراسلے میں یہ ہدایت بھی کی گئی ہے کہ سرکاری ریکارڈ کو ریکارڈ روم میں محفوظ کر کے سی سی ٹی وی کیمرے لگائے جائیں تاکہ سی سی ٹی وی کیمروں کی مدد سے بلا اجازت ریکارڈ اٹھانے والوں کی نشاندہی ہو سک

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں