Parvez-Khattak-murreenews 122

وزيراعظم کا استعفیٰ ناممکن ہے، لگتا ہے اپوزیشن والے چڑھائی کرنا چاہتے ہیں

حکومت کی جانب سے ایک بار پھر مولانا فضل الرحمان اور دیگر اپوزیشن جماعتوں کو مذاکرات کی پیشکش کی گئی ہے۔مذاکراتی کمیٹی کی سربراہ وزیر دفاع پرویز خٹک نے کہا ہے کہ اپوزیشن والے ساتھ نہیں بیٹھتے اس کا مطلب ہے کہ ان کے دل میں چور ہے اور ان کا ایجنڈا کچھ اور ہے۔پرویز خٹک نے کہا کہ اگر اپوزیشن کا ایجنڈا پاکستان ہے تو بات کرنا پڑے گی، وزيراعظم کا استعفیٰ ناممکن سی بات ہے، اس کا مطلب ہے کہ یہ چڑھائی کرنا چاہتے ہیں۔

فضل الرحمان سے مذاکرات کیلئے حکومت نے 7 رکنی کمیٹی تشکیل دے دیوزیر
دفاع نے خبردار کیا کہ افرا تفری ہوئی تو ذمہ د اری اپوزیشن والوں پر ہوگی، فضل الرحمان ریاست کے ستونوں پر حملے نہ کریں۔انہوں نے کہا کہ ہم ن لیگ، پیپلز پارٹی، عوامی نیشنل پارٹی سمیت ہر جماعت کے سینیئر لیڈر سے رابطے میں ہیں۔خیال رہے کہ مذاکراتی کمیٹی وزیراعظم عمران خان کی ہدایت پر تشکیل دی گئی ہے جو کہ جمعیت علمائے اسلام (جے یو آئی ) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان سمیت تمام اپوزیشن جماعتوں سے رابطے کرے گی۔مذاکراتی کمیٹی میں اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر ، چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی ، اسد عمر ، وفاقی وزیر شفقت محمود اور وفاقی وزیر برائے مذہبی امور نورالحق قادری سمیت مسلم لیگ ق کے رہنما پرویز الٰہی بھی شامل ہیں
حکومتی کمیٹی مولانا فضل الرحمان اور اپوزیشن سے آزادی مارچ اور دھرنے کے حوالے سے مذاکرات کرے گی جب کہ مولانا فضل الرحمان کا دو ٹوک مؤقف ہے کہ اگر کسی نے مذکرات کیلئے آنا ہے تو وزیراعظم کا استعفیٰ ساتھ لے کر آئے۔واضح رہے کہ مولانا فضل الرحمان نے گذشتہ انتخابات میں مبینہ دھاندلی اور وفاقی حکومت کی پالیسیوں کے خلاف 27 اکتوبر سے مارچ شروع کرنے اور 31 اکتوبر کو اسلام آباد میں دھرنا دینا کا اعلان کررکھا ہے۔ملک کی اہم اپوزیشن جماعتیں مسلم لیگ ن ، پیپلز پارٹی اور عوامی نیشنل پارٹی بھی جے یو آئی کے مارچ کی حمایت کررہی ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں