updates 57

پاکستان کا تاریخی دورہ مکمل کر کے برطانوی شاہی جوڑا واپس روانہ

برطانوی شاہی جوڑا پاکستان کا تاریخی دورہ مکمل کر کے وطن واپس روانہ ہو گیا۔برطانوی شہزادہ ولیم اور شہزادی کیٹ مڈلٹن چار روزہ دورے پر پاکستان آئے تھے۔ اس دوران انہوں نے اسلام آباد، لاہور اور شمالی علاقہ جات کے خوبصورت مقامات کی سیر کی۔
اس دوران شاہی جوڑا پاکستان کے ثقافتی رنگوں میں نظر آیا جسے پاکستانی مداحوں نے خوب سراہا۔برطانوی شہزادہ ولیم اور ان کی اہلیہ کیٹ مڈلٹن 14 اکتوبر کو رات9 بجے کے قریب نور خان ائیربیس پر اترے۔برطانوی شاہی خاندان کے کسی فرد کا 13 سال بعد یہ پہلا دورہ پاکستان تھا، شہزادہ چارلس اور ڈچز آف کارنوال 2006 میں پاکستان آچکے ہیں۔
اس موقع پر شاہی جوڑے نے مختلف تقریبات میں شرکت کی اور اپنے خیالات کا اظہار بھی کیا۔برطانوی شہزادی ولیم اور ان کی اہلیہ نے اپنے دورے کے پہلے روز یعنی 15 اکتوبر بروز منگل کو صدر مملکت عارف علوی اور وزیراعظم عمران خان سے ملاقات کی تھی۔اسی روز رات میں شاہی جوڑا رکشے میں سوار ہوکر عشائیے میں شرکت کیلئے یادگارِ پاکستان پہنچا جہاں سماجی، سیاسی اور شوبز سے تعلق رکھنے والی شخصیات بھی مدعو تھیں۔اپنے دورے کے دوسرے روز 16 اکتوبر کو شاہی جوڑے نے چترال کی حسین وادیوں کا رخ کیا، جہاں چترال کے شہریوں نے گرمجوشی سے شاہی جوڑے کو خوش آمدیدکہا جبکہ شاہی جوڑے نے وادی کیلاش میں مقامی لوگوں کے ساتھ بیٹھ کر چترالی رقص بھی دیکھا۔شاہی جوڑے نے چترال میں ہندوکش کے پہاڑی سلسلے میں چیاٹو گلیشیئر پر موسمیاتی تبدیلی کے اثرات کا بھی جائزہ لیا۔

دورے کے تیسرے روز 17 اکتوبر کو شاہی جوڑا لاہور آیا جہاں اس نے ایس او ایس ولیج کا دورہ کیا، بادشاہی مسجد گئے، نیشنل کرکٹ اکیڈمی آئے اور شوکت خانم میموریل اسپتال کا دورہ کیا۔شاہی جوڑے کو اسی رات اسلام آباد روانہ ہونا تھا تاہم موسم کی خرابی کی وجہ سے طیارے کو واپس لاہور لے آیا گیا اور شاہی جوڑے کو رات لاہور میں ہی قیام کرنا پڑا۔

دورے کے آخری روز 18 اکتوبر کو شہزادہ ولیم اور ان کی اہلیہ نے اسلام آباد میں آرمی کینائن سینٹر کا دورہ کیا۔

بعد ازاں برطانوی شاہی جوڑا اسلام آباد سے اپنے خصوصی طیارے میں وطن واپسی کے لیے روانہ ہو گیا جہاں انہیں پاکستانی اعلیٰ حکام اور برطانوی ہائی کمیشن کے اہلکاروں نے رخصت کیا۔