78

وزیراعظم عمران خان کا نیا پاکستان ہاﺅسنگ پروگرام کیلئے حکومت پاکستان، یو این او پی ایس اور ایس ایچ ایس کے مابین مفاہمت کی یادداشت پر دستخط کی تقریب سے خطاب

وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ 50 لاکھ گھروں کی تعمیر کا منصوبہ ایک اہم سنگ میل ہے، 10 سالہ لوٹ مار کی وجہ سے ملک میں پیسے کی کمی ہے، نیا پاکستان ہاﺅسنگ منصوبہ آسان نہیں ہے، اس منصوبے سے جہاں کم آمدنی والے طبقہ کو اپنے گھر ملیں گے وہاں ملک کی چالیس صنعتوں کو براہ راست فائدہ ہو گا اور نوجوانوں کوروزگار ملے گا، نیا پاکستان ہاﺅسنگ منصوبہ کے تحت اقوام متحدہ کے آفس برائے پراجیکٹ سروسز (یو این او پی ایس) اور سسٹین ایبل ہاﺅسنگ سلوشنز (ایس ایچ ایس) کی جانب سے 5 لاکھ گھر بنانے کے فیصلے پر ان کے شکر گزار ہیں، نیا پاکستان ہاﺅسنگ و ڈویلپمنٹ اتھارٹی ون ونڈو آپریشن کے تحت تعمیراتی کمپنیوں سمیت دیگر کے مسائل حل کر رہی ہے، پاکستان میں گھر بنانے کیلئے بینکوں کی جانب سے قرضے دیئے جانے کی شرح 0.2 فیصد ہے جبکہ بھارت میں یہ شرح 10 فیصد ہے، قانونی قدغنوں کی وجہ سے بینک گھروں کی تعمیر کیلئے قرضے نہیں دے رہے، لاہور ہائیکورٹ کے چیف جسٹس سے استدعا ہے کہ وہ اس حوالے سے پٹیشن کی جلد سماعت کریں تاکہ اس ضمن میں رکاوٹیں دور ہو سکیں۔ وہ بدھ کو نیا پاکستان ہاﺅسنگ پروگرام کیلئے حکومت پاکستان، اقوام متحدہ کے آفس برائے پراجیکٹ سروسز (یو این او پی ایس) اور سسٹین ایبل ہاﺅسنگ سلوشنز (ایس ایچ ایس) کے مابین مفاہمت کی یادداشت پر دستخط کی تقریب سے خطاب کر رہے تھے۔ قبل ازیں مفاہمت کی یادداشت پر حکومت پاکستان کی جانب سے سیکرٹری ہاﺅسنگ و تعمیرات ڈاکٹر عمران زیب، اقوام متحدہ کے آفس برائے پراجیکٹ سروسز کے ڈپٹی ایگزیکٹو ڈائریکٹر وٹالی وینشل بوام اور سسٹین ایبل ہاﺅسنگ سلوشنز کے نمائندے نے دستخط کئے۔ یہ ادارے پاکستان میں پانچ لاکھ گھر بنانے کیلئے مالی سروسز فراہم کرینگے۔ اس موقع پر تقریب سے وفاقی وزیر ہاﺅسنگ و تعمیرات چوہدری طارق بشیر چیمہ، سیکرٹری وزارت ہاﺅسنگ ڈاکٹر عمران زیب، اقوام متحدہ کے آفس برائے پراجیکٹ سروسز کے ڈپٹی ایگزیکٹو ڈائریکٹر وٹالی وینشل بوام نے بھی خطاب کیا۔

کیٹاگری میں : Uncategorized

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں