Senator Shibli Faraz 19

پارلیمنٹ میں موجود اپوزیشن جماعتوں کی ذمہ دار اور سنجیدہ قیادت کے ساتھ بات چیت کے لئے تیار ہیں

:اسلام آباد: وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات سینیٹر شبلی فراز نے نیشنل ڈائیلاگ کے لئے پارلیمنٹ کو موزوں ترین پلیٹ فارم قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ پارلیمنٹ میں موجود اپوزیشن جماعتوں کی ذمہ دار اور سنجیدہ قیادت کے ساتھ بات چیت کے لئے تیار ہیں ‘ بات چیت میں اتفاق رائے ہوجائے گا ‘ الیکٹوریل ریفارمز سمیت ہر ایشو پر بات چیت ہوسکتی ہے ‘ مولانا فضل الرحمان اور مریم نواز تو پارلیمان کا حصہ ہی نہیں وہ تو ویسے بھی باہر سمجھیں ‘ شیرانی ‘حافظ حسین احمد اور دیگر نے مولانا فضل الرحمان کو سلیکڈ کہااور باقی صفات بھی بیان کیں ‘ وہ اپنی پارٹی کے اندر رہتے ہوئے تشخص کو ابھار رہے ہیں۔ وہ پیر کو وفاقی وزراءچوہدری فواد حسین اور فیصل ووڈا کے ہمراہ پی آئی ڈی میں پریس کانفرنس سے خطاب کر رہے تھے ۔ وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات سینیٹر شبلی فراز نے کہا کہ نیشنل ڈائیلاگ ‘ ہم یہ ہی کہتے ہیں کہ جب بھی کوئی بات ہوگی سب سے موزوں پلیٹ فارم پارلیمنٹ ہے کیونکہ عوامی نمائندوں کا اصل فورم پارلیمنٹ ہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ذمہ دار اور سنجیدہ لوگوں سے بات ہوگی ‘امید ہے کہ سیر حاصل بات چیت کے بعد اتفاق رائے ہوجائے گا ۔ انہوں نے کہا کہ اپوزیشن عجیب کشمکش کا شکار ہے جہاں الیکشن جیتی ہے وہ الیکشن اچھے اور جہاں ہاری ہے وہاں الیکشن میں دھاندلی کے راگ ا لاپ رہی ہے ۔وفاقی وزیراطلاعات نے کہا کہ اپوزیشن کے جلسے میں بلوچستان کے شہداء سے متعلق کوئی ذکر نہیں کیا گیا‘ جلسے میں قومی اداروں پر تنقید کی گئی‘ اپوزیشن کا مقصد ملک میں افراتفری پیدا کرنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بے نظیر بھٹو کے مزار پر ان کے دشمنوں کو بٹھایا گیا۔