pm pakistan 18

بوسنیا کیساتھ تعلقات کو فروغ دیں‌ گے، مسئلہ کشمیر پر حمایت کے شکرگزار ہیں: وزیراعظم

اسلام آباد :وزیراعظم عمران خان نے کہاہے کہ بوسنیا کیساتھ دیرینہ تعلقات ہیں، بوسنیاکے ساتھ دوطرفہ تعلقات بڑھانا چاہتے ہیں،مسئلہ کشمیر پرپاکستان کی حمایت کے شکرگزارہیں،آزادی اظہاررائے کوکسی مذہب کیخلاف استعمال نہیں کرنا چاہیے۔ وزیر اعظم عمران خان نے بوسنیا کے صدر سے ملاقات اور مفاہمتی یادداشت پر دستخط کے بعد مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ بوسنیا نے مشکل وقت دیکھا ہے اور ہم دونوں ممالک کے درمیان تعلقات میں مزید فروغ کے خواہاں ہیں۔انہوں نے کہا کہ پاکستان بوسنیا کے ساتھ تمام شعبوں میں تعلقات کا خواہاں ہے جبکہ دونوں ملکوں نے تجارت سمیت مختلف شعبوں میں تعاون کا فیصلہ کیا ہے اور بوسنیا کے ساتھ تعلقات کو پاکستان خصوصی اہمیت دیتا ہے۔عمران خان نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر پر پاکستان کے موقف کی تائید پر بوسنیا کے صدر کا مشکور ہوں اور دنیا کو معلوم ہے اس وقت بھارت کشمیر میں کیا کر رہا ہے۔ ہم نے ملاقات میں فرانس میں مسلمانوں کے خلاف حالیہ واقعات پر بھی بات کی ہے۔انہوں نے کہا کہ مغرب کو سمجھنا چاہیے آزادی رائے کا مقصد دل آزاری نہیں ہونی چاہیے اور آزادی اظہار رائے کو کسی مذہب کے خلاف استعمال نہیں کرنا چاہیے،کوئی مسلمان رسول کریمﷺ کی شان میں توہین برداشت نہیں کرسکتا۔عمران خان نے کہا کہ دورہ بوسنیا کی دعوت پرشکریہ اداکرتاہوں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں