پنجاب کے وزیر کو شہباز گل پر تشدد کے ثبوت مل گئے۔

راولپنڈی:

پنجاب کے وزیر داخلہ ہاشم ڈوگر نے اتوار کو کہا کہ پاکستان تحریک انصاف کے رہنما شہباز گل کو جب عدالتی تحویل میں اڈیالہ جیل لایا گیا تو ان کے جسم پر تشدد کے نشانات تھے، لیکن جیل حکام نے متعلقہ حکام کو آگاہ نہیں کیا۔

ڈوگر نے راولپنڈی کی اڈیالہ جیل کا اچانک دورہ کیا۔ وزیر نے بعد میں کہا کہ جیل انٹری بک میں درج معلومات سے پی ٹی آئی کا موقف ثابت ہوتا ہے کہ پارٹی چیئرمین عمران خان کے چیف آف سٹاف گل کو جیل آنے سے قبل تشدد کا نشانہ بنایا گیا۔

پی ٹی آئی نے الزام لگایا ہے کہ گل کو اس ماہ کے شروع میں پولیس کی حراست میں تشدد کا نشانہ بنایا گیا تھا۔ تاہم، حکومت اور پولیس نے ان الزامات کی تردید کی، وزیر داخلہ رانا ثناء اللہ نے اتوار کو کہا کہ پارٹی عوام کی توجہ گل کے متنازعہ بیان سے ہٹانے کے لیے جھوٹ پھیلا رہی ہے۔

گل کو 9 اگست کو وفاقی دارالحکومت کے کوہسار پولیس اسٹیشن میں ایک نجی ٹیلی ویژن چینل پر متنازعہ ریمارکس پر بغاوت کا مقدمہ درج ہونے کے بعد گرفتار کیا گیا تھا۔ اسے اگلے دن جج کے سامنے لایا گیا اور 12 اگست کو جیل بھیج دیا گیا۔

یہ بھی پڑھیں: عمران نے عوام کو گمراہ کرنے کے لیے گل ٹارچر کو ’جعلی‘ بنایا، رانا ثنا اللہ

پنجاب کے وزیر ڈوگر کے مطابق جب گل کو عدالت نے اڈیالہ جیل لایا تو جیل حکام نے قواعد کے مطابق طبی معائنہ کیا جس سے ان کے جسم پر تشدد کے غیر معمولی نشانات سامنے آئے۔ انہوں نے مزید کہا کہ میڈیکل آفیسر نے ابتدائی معائنے کی رپورٹ میں ان علامات کو نوٹ کیا۔

قواعد و ضوابط کے مطابق جیل وارڈن کو مجسٹریٹ اور پولیس کو چوٹ کی علامات کے بارے میں آگاہ کرنا ہوگا۔ لیکن وزیر نے کہا کہ اس وقت جیل وارڈن نے کسی کو تشدد کے نشانات سے آگاہ نہیں کیا۔

ڈوگر نے کہا، "اس سنگین غفلت کے لیے جیل سپرنٹنڈنٹ اور متعلقہ حکام کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی۔” ‘اس بات کی تحقیقات کی جائیں گی کہ آیا یہ غفلت تھی یا جیل وارڈن نے کسی اور کے کہنے پر کام کیا۔’


ِ
#پنجاب #کے #وزیر #کو #شہباز #گل #پر #تشدد #کے #ثبوت #مل #گئے

(شہ سرخی کے علاوہ، اس کہانی کو مری نیوز کے عملے نے ایڈٹ نہیں کیا ہے اور یہ خبر ایک فیڈ سے شائع کیا گیا ہے۔)

جواب دیں