وزیر اعظم شہباز شریف نے محکمہ جاتی کھیلوں پر پابندی ختم کر دی۔

اسلام آباد:

وزیر اعظم شہباز شریف نے جمعرات کو سابق وزیر اعظم عمران خان کی حکومت کے فیصلے کو پلٹتے ہوئے ملک میں محکمہ جاتی کھیلوں پر سے پابندی اٹھانے کا اعلان کیا۔

یہ پابندی پی ٹی آئی حکومت نے تمام سرکاری محکموں، کارپوریشنز اور خود مختار اداروں سے 30 مختلف شعبوں میں کھیلوں کی ٹیموں کی فنڈنگ ​​روکنے کے لیے لگائی تھی۔ اس فیصلے سے ہزاروں محکمانہ کھیلوں کے عہدوں سے بے روزگار ہو گئے تھے۔

وزیر اعظم شہباز نے عہدہ سنبھالنے کے بعد نوجوانوں میں صحت مند کھیلوں کو فروغ دینے کے مقصد سے محکمانہ کھیلوں کی بحالی کا عہد کیا۔

انہوں نے کہا کہ کامن ویلتھ گیمز اور اسلامک سولیڈیرٹی گیمز میں اعلیٰ پوزیشنز حاصل کرنے والے پاکستانی کھلاڑیوں نے ملک کا سر فخر سے بلند کیا اور وہ ملک کے نوجوانوں کے لیے ایک تحریک ہیں۔

مزید پڑھیں: عمران نے قطر میں شہباز کے ‘بھیک مانگنے کے مشن’ پر حملہ کیا۔

وزیر اعظم حال ہی میں برمنگھم، برطانیہ اور ترکی میں منعقدہ بین الاقوامی کھیلوں کے مقابلوں میں جیتنے والے کھلاڑیوں میں نقد انعامات کی تقسیم کی تقریب سے خطاب کر رہے تھے۔

انہوں نے کہا کہ پوری قوم کو کھلاڑیوں کی شاندار کارکردگی پر فخر ہے جنہوں نے محنت اور لگن سے اپنی صلاحیتوں کا لوہا منوایا ہے۔

انہوں نے یقین ظاہر کیا کہ باصلاحیت کھلاڑی ملک کا مزید نام روشن کریں گے اور اپنے اپنے کھیلوں میں کامیابیاں حاصل کرتے رہیں گے۔

وزیر اعظم شہباز شریف نے کہا کہ کالج اور یونیورسٹی کی سطح پر کھیلوں کے مقابلوں کے انعقاد کے لیے اقدامات کیے جائیں گے تاکہ طلباء کو صحت مندانہ سرگرمیوں میں شامل کرنے کی ترغیب دی جا سکے۔

انہوں نے یہ بھی بتایا کہ ملک بھر میں سیلاب کی وجہ سے پاکستان مشکل وقت سے گزر رہا ہے۔ انہوں نے سیلاب کی وجہ سے گزشتہ چند ماہ میں 900 سے زائد افراد کی ہلاکت پر دکھ کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ حکومت متاثرین کو امداد اور بحالی کی فراہمی میں کوئی کسر نہیں چھوڑے گی۔

قبل ازیں وزیراعظم نے اسلام آباد میں وزیراعظم ہاؤس میں منعقدہ خصوصی تقریب میں نوح دستگیر بٹ، شاہ حسین، شریف طاہر، ارشد ندیم اور دیگر کھلاڑیوں میں نقد انعامات تقسیم کئے۔


ِ
#وزیر #اعظم #شہباز #شریف #نے #محکمہ #جاتی #کھیلوں #پر #پابندی #ختم #کر #دی

(شہ سرخی کے علاوہ، اس کہانی کو مری نیوز کے عملے نے ایڈٹ نہیں کیا ہے اور یہ خبر ایک فیڈ سے شائع کیا گیا ہے۔)

جواب دیں