مٹیاری میں گیسٹرو سے مزید 4 بچے دم توڑ گئے۔

مٹیاری:

جمعرات کو ضلع مٹیاری میں ایک سے 13 سال کی عمر کے مزید چار بچے معدے کے انفیکشن کی بیماری سے چل بسے جنہیں عام طور پر گیسٹرو کہا جاتا ہے۔

مٹیاری ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال ذرائع نے بتایا کہ بچوں کو پیٹ میں شدید درد، قے اور اسہال کے ساتھ لایا گیا تھا۔

ڈسٹرکٹ ہیلتھ آفیسر (ڈی ایچ او) ڈاکٹر ونود نے کہا کہ گزشتہ دو ماہ کے دوران ضلع میں گیسٹرو سے مرنے والوں کی تعداد نو تک پہنچ گئی ہے۔ مزید یہ کہ پانی سے پیدا ہونے والے مزید 50 مریضوں کو ضلع بھر کے مختلف اسپتالوں میں لایا گیا۔

ڈاکٹر ویونو نے کہا کہ مختلف ہسپتالوں میں گیسٹرو کے مریضوں کی کل تعداد 350 کے قریب پہنچ گئی ہے۔

کوٹری کے ڈسٹرکٹ ہیلتھ آفیسر ڈاکٹر برکت لغاری نے روزنامہ ایکسپریس کو بتایا کہ گیسٹرو کے 60 سے 70 مریض روزانہ اسپتال آتے ہیں جن میں سے ابتر حالت کے مریضوں کو اسپتال میں داخل کیا جا رہا ہے۔

لیاقت میڈیکل ہسپتال جامشورو کے اسسٹنٹ میڈیکل سپرنٹنڈنٹ ڈاکٹر نیاز بابر نے روزنامہ ایکسپریس کو بتایا کہ روزانہ کی بنیاد پر 70 سے 80 کے قریب افراد گیسٹرو کا شکار ہو رہے ہیں۔ اسی طرح گیسٹرو سے متاثرہ متعدد افراد کو ضلع کے مانجھند، سان اور دیگر مراکز صحت کے سیٹلمنٹ ہسپتالوں میں لایا گیا ہے جہاں انہیں محکمہ صحت جامشورو کی جانب سے طبی سہولیات فراہم کی جا رہی ہیں۔

دوسری جانب وزیراعلیٰ سندھ نے منچھر جھیل میں گیسٹرو کی بیماری پھیلنے اور ضلع بھر میں بچوں کی اموات کا نوٹس لیتے ہوئے ڈی سی جامشورو سے رپورٹ طلب کرتے ہوئے منچھر جھیل پر میڈیکل کیمپ لگانے کا حکم دے دیا۔ انہوں نے کہا کہ جھیل کے کنارے میڈیکل کیمپ لگایا جائے گا اور متاثرہ بچوں کو مکمل طبی سہولیات فراہم کی جائیں گی۔

جامشورو کے ڈی سی سی پی ٹی (ر) فرید الدین مصطفائی نے کہا کہ ضلع میں گیسٹرو کی بیماری پر قابو پانے کے لیے کوششیں شروع کر دی گئی ہیں۔

ایکسپریس ٹریبیون، اگست 19 میں شائع ہوا۔ویں، 2022۔


ِ
#مٹیاری #میں #گیسٹرو #سے #مزید #بچے #دم #توڑ #گئے

(شہ سرخی کے علاوہ، اس کہانی کو مری نیوز کے عملے نے ایڈٹ نہیں کیا ہے اور یہ خبر ایک فیڈ سے شائع کیا گیا ہے۔)

جواب دیں