سیلاب، بارشوں سے 727,000 سے زیادہ مویشی ہلاک ہو گئے۔

لاہور:

ملک بھر میں سیلاب اور بارشوں کے باعث 727,000 سے زائد مویشی مر چکے ہیں اور یہ تعداد تیزی سے بڑھ رہی ہے۔

ملک بھر میں جہاں لاکھوں مویشی لمپی سکن ڈیزیز کی وجہ سے مر گئے وہیں اب سیلاب اور بارشوں کی وجہ سے مویشیوں کی بڑے پیمانے پر اموات ہوئی ہیں۔

نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی (این ڈی ایم اے) کے مطابق 14 جون سے 28 اگست تک ملک بھر کی ضلعی انتظامیہ سے موصول ہونے والے اعداد و شمار کے مطابق اب تک 7 لاکھ 27 ہزار 144 مویشی ہلاک ہو چکے ہیں۔

بلوچستان میں 500,000 سے زائد مویشی، خیبرپختونخوا میں 8,771، پنجاب میں 23,000 اور سندھ میں 15,000 مویشی مر چکے ہیں۔

پروگریسو فارمز کے مطابق مویشیوں کی ہلاکت کی وجہ سے ملک میں گوشت، دودھ، دہی اور دودھ کی مصنوعات کی قلت ہے۔

پنجاب لائیو سٹاک کے ترجمان ڈاکٹر آصف رفیق نے بتایا کہ راجن پور میں 266700، ڈیرہ غازی خان میں 1784، میانوالی میں 331 اور لیہہ میں 5 مویشی مر چکے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ امدادی اداروں کے تعاون سے سیلاب سے متاثرہ علاقوں سے 7,759 جانوروں کو بچایا گیا اور 250 کے قریب جانور خیموں میں رہنے والے بچائے گئے خاندانوں کے ساتھ ہیں۔ اسی طرح 187,000 سے زائد چھوٹے اور بڑے مویشیوں کو ٹیکے لگائے گئے۔

لائیو سٹاک حکام کے مطابق سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں مویشیوں میں پاؤں اور منہ اور پیٹ کی بیماریاں پھیل سکتی ہیں۔

مالی سال 2021-22 کے اقتصادی سروے کے مطابق پاکستان کی زرعی ویلیو ایڈڈ مصنوعات میں لائیو سٹاک کا حصہ 61 فیصد ہے جبکہ پاکستان کی مجموعی جی ڈی پی میں لائیو سٹاک کا حصہ 14 فیصد ہے۔

پاکستان کی دیہی آبادی کے 80 لاکھ خاندان مویشی پالتے ہیں اور ان کی آمدنی کا 35-40 فیصد مویشیوں سے آتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: معجزے کی امید میں پریشان سیلاب متاثرین

تاہم گزشتہ مالی سال کے دوران لائیو سٹاک کے شعبے میں 3 فیصد بہتری آئی ہے اور مختلف صوبائی حکومتوں کی جانب سے اس شعبے کو فروغ دینے کے لیے اقدامات کیے جا رہے ہیں۔

ایکسپریس ٹریبیون سے گفتگو کرتے ہوئے ترقی پسند کسان عامر حیات بھنڈارا کا کہنا تھا کہ سیلاب اور بارشوں سے مویشیوں کی ہلاکت سرکاری اداروں کے اعدادوشمار سے زیادہ ہو سکتی ہے کیونکہ مویشیوں کی موت کے بہت سے کیسز رپورٹ نہیں ہوئے تھے۔

انہوں نے کہا کہ مویشیوں کی ہلاکت اور فصلوں کی تباہی کی وجہ سے جن خاندانوں کی زندگیاں صرف مویشیوں کے دودھ اور گوشت سے حاصل ہونے والی آمدنی پر منحصر تھیں ان کی معاشی حالت مزید خراب ہو جائے گی بلکہ اس سے ملک کی معیشت کو بھی دھچکا لگے گا۔ معیشت”

انہوں نے کہا کہ ملک بھر میں گوشت، دودھ، دہی اور دودھ کی مصنوعات کی قلت شروع ہوگئی ہے۔ انہوں نے امدادی اداروں سے اپیل کی کہ وہ جہاں انسانوں کو خوراک فراہم کر رہے ہیں وہیں مویشیوں کے لیے چارے کا بھی بندوبست کریں۔

ڈیری اینڈ کیٹل فارمرز ایسوسی ایشن کے مطابق پاکستان میں اس وقت 8 ہزار سے زائد گائیں اور بھینسیں موجود ہیں جن کی مالیت 16 ہزار ارب روپے سے زائد ہے اور یہ ملک کا سب سے قیمتی سرمایہ ہیں۔

وہ پاکستان کو روزانہ 130 ملین لیٹر دودھ سپلائی کرتے ہیں جس کی مالیت 13 ارب روپے یومیہ اور سالانہ 4745 ارب روپے ہے۔ حکومتی اندازوں کے مطابق ملک کے کل مویشیوں کا 70 فیصد پنجاب سے ہے اور 85 فیصد مویشی چھوٹے کسانوں نے پالے ہیں جن میں سے ہر ایک میں دو سے 10 مویشی ہیں۔


ِ
#سیلاب #بارشوں #سے #سے #زیادہ #مویشی #ہلاک #ہو #گئے

(شہ سرخی کے علاوہ، اس کہانی کو مری نیوز کے عملے نے ایڈٹ نہیں کیا ہے اور یہ خبر ایک فیڈ سے شائع کیا گیا ہے۔)

جواب دیں