سپرنٹر معید نے حکومت پر زور دیا کہ وہ کھلاڑیوں کی مدد کرے۔

کراچی:

"صحیح ٹریک پر دوڑنا بہت مزہ تھا،” پاکستان کے معید بلوچ نے کہا، جسے پاکستان کے بولٹ کا نام آئیکون یوسین بولٹ کے نام پر رکھا گیا ہے، جو ترکی کے شہر قونیہ میں اسلامی یکجہتی گیمز میں 400 میٹر دوڑ کے فائنل میں اپنی جگہ بنانے کے خواہاں ہیں۔

معید ایک روشن نوجوان ہے جس نے اس سال کے شروع میں امام رضا انٹرنیشنل ٹورنامنٹ، مشہد، ایران اور قازقستان میں عالمی ایتھلیٹکس مقابلوں میں چاندی اور کانسی کے تمغے جیتے ہیں۔ اس نے گھڑی پر 46.75 سیکنڈ میں اسلامک سولیڈیرٹی گیمز کے سیمی فائنل کے لیے کوالیفائی کیا، جہاں وہ اپنی ہیٹ میں چوتھے نمبر پر رہے۔

کونیا میں تین ہیٹ ایک سخت مقابلہ تھا، اور کراچی میں نیشنل کوچنگ سینٹر کے کٹے ہوئے ٹریک پر ٹریننگ کرنے والے معید کا خیال ہے کہ وہ بہتری لا رہے ہیں لیکن بین الاقوامی ایتھلیٹس بنیادی طور پر اس لیے قیادت کرتے ہیں کیونکہ ان کے پاس بہتر سہولیات اور کوچ ہیں۔

معید ساؤتھ ایشین جونیئر ایتھلیٹکس چیمپئن شپ میں چاندی اور کانسی کا تمغہ جیتنے والا بھی ہے۔

21 سالہ کھلاڑی اپنے کوچ روما الطاف یا پیشہ ور افراد کی کسی ٹیم کے بغیر بھی ہیں جو اس ایونٹ میں رہنمائی کرنے میں ان کی مدد کریں۔

"میں تمغہ جیتنا چاہتا ہوں اور مقابلہ سخت ہوگا،” معید نے سیمی فائنل کے لیے کوالیفائی کرنے کے بعد ایکسپریس ٹریبیون کو بتایا۔

"میں اپنی پوری کوشش کر رہا ہوں اور میں کم از کم اپنے ملک کے لیے نئے ریکارڈ بنانا چاہتا ہوں، لیکن بہت سخت مقابلہ ہے۔”

معید نے مئی میں 46.73 سیکنڈ کے ساتھ اس سال ایران میں نیا قومی ریکارڈ بنایا اور چاندی کا تمغہ حاصل کیا۔

معید اولمپکس میں بھی شامل ہونا چاہتا ہے اور اسے یقین ہے کہ اگر سہولیات فراہم کی جائیں تو وہ اپنی رفتار سے بہتری لا سکتا ہے۔

کھلاڑیوں کی مدد کریں، پاکستان کی مدد کریں۔

معید کی حکومت اور کھیلوں کے اداروں سے عاجزانہ درخواست ہے کہ وہ اس بات کو یقینی بنائیں کہ کھلاڑی بین الاقوامی مقابلوں میں اپنے کوچز اپنے ساتھ رکھیں اور کھلاڑیوں کے لیے سہولیات کو بہتر بنائیں۔

"جب بھی ہم کہیں جاتے ہیں تو وہ ہم سے پوچھتے ہیں کہ ہم کیا کرتے ہیں، جب ہم انہیں بتاتے ہیں کہ ہم سپرنٹر ہیں، ایتھلیٹکس ہمارا میدان ہے، لوگ ہماری کوششوں کو تسلیم نہیں کرتے اور نہ ہی ہمیں سنجیدگی سے لیتے ہیں۔ یقیناً ارشد ندیم نے جو کچھ حاصل کیا اس سے ہماری بہت مدد ہوئی، لیکن اب حکومت کو ہماری طرف توجہ دینی چاہیے، ہمیں مدد کی ضرورت ہے اور ہم پاکستان کے لیے تمغے جیتیں گے،‘‘ معید نے کہا۔

انہوں نے نشاندہی کی کہ انہیں اپنے کوچ سے فون کے ذریعے باقاعدگی سے بات کرنی پڑتی ہے، جو کہ اس وقت نہیں ہوتا جیسا کہ کوچ اس مقام پر ہوتا ہے جب کھلاڑی پرفارم کر رہا ہو۔

“جب ہم دوسرے ممالک کے کھلاڑیوں کو دیکھتے ہیں تو ہم دیکھتے ہیں کہ ان کے پاس کوچز ہیں، فزیوتھراپسٹ ہیں، انہیں سہولیات ہیں۔ کراچی میں جہاں میں ٹریک چلاتا ہوں بہت برا ہے۔

"میں نیشنل کوچنگ سینٹر کے ٹریک پر دوڑتے ہوئے اتنی بار زخمی ہو چکا ہوں کہ اب میں گن نہیں سکتا۔ یہاں کونیا کا ٹریک اچھا اور اچھالتا ہے اور مجھے اس پر دوڑنا بہت اچھا لگتا ہے، یہ مزہ تھا،‘‘ معید نے اپنے سیمی فائنل کی تیاری کے لیے جاتے ہوئے کہا۔


ِ
#سپرنٹر #معید #نے #حکومت #پر #زور #دیا #کہ #وہ #کھلاڑیوں #کی #مدد #کرے

اس خبر کو درجہ ذیل لنک سے حاصل کیا گیا ہے
(https://tribune.com.pk/story/2370336/sprinter-mueed-urges-govt-to-support-athletes)

جواب دیں