آرٹیکل 144 کی خلاف ورزی کیس میں اسد عمر کی عبوری ضمانت منظور

اسلام آباد:

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے رہنما اسد عمر کو جمعرات کو 20 اگست کو وفاقی دارالحکومت میں جلسہ کرنے کے الزام میں دفعہ 144 کے مقدمے میں عبوری ضمانت مل گئی۔

پی ٹی آئی کے سینئر رہنما اور وکیل بابر اعوان کی جانب سے عدالت کے ایک ایڈیشنل سیشن میں ضمانت کی درخواست دائر کرنے کے بعد عمر اور پارٹی رہنما عمران خان کے ساتھ آج صبح عدالت میں پیش ہوئے۔

درخواست میں اعوان عمر نے کہا کہ وہ پولیس تفتیش کا حصہ بننے کے لیے تیار ہیں اور نشاندہی کی کہ درخواست گزار لاہور میں ایک ریلی میں تھے جب ملک کے مختلف حصوں میں مظاہرے ہو رہے تھے۔

ایڈیشنل سیشن جج ظفر عباس نے کیس کی سماعت کی اور پی ٹی آئی کے جنرل سیکرٹری کی 5000 روپے کے ضمانتی مچلکے کے عوض ضمانت منظور کی۔

واضح رہے کہ پی ٹی آئی کے 6 ارکان کو ایک روز قبل آرٹیکل 144 کی خلاف ورزی کے مقدمے میں فاضل عدالت نے عبوری ضمانت دی تھی۔

انہوں نے دلیل دی کہ قائدین کے خلاف الزامات کی شرائط قابل ضمانت ہیں اور درخواست کی کہ انہیں ضمانت دی جائے۔

پڑھیں حامیوں کے ایک سمندر نے عمران کی گرفتاری روک دی۔

بدھ کو ایڈیشنل سیشن عدالت کے جج فیضان حیدر گیلانی نے پی ٹی آئی رہنماؤں کی 20 ہزار روپے کے مچلکوں پر عبوری ضمانت منظور کر لی۔

ضمانت یافتہ رہنماؤں میں سیف اللہ نیازی، علی اعوان، راجہ خرم، فیصل جاوید، صداقت عباسی اور شہزاد وسیم شامل ہیں۔

سابق حکمران جماعت کے ارکان نے آبپارہ پولیس اسٹیشن میں اپنے اور پی ٹی آئی کے دیگر 19 رہنماؤں کے خلاف مقدمہ درج ہونے کے بعد ضمانت کی درخواست دی تھی۔

پارٹی رہنماؤں نے پی ٹی آئی رہنما شہباز گل کی گرفتاری اور "جیل میں تشدد” کے خلاف احتجاجی ریلی میں شرکت کی تھی۔

پی ٹی آئی رہنماؤں کے وکلاء نے کہا کہ ان کے خلاف مقدمہ "بے بنیاد” ہے، انہوں نے مزید کہا کہ ریلی پرامن تھی اور یہ مقدمات رہنماؤں کو "دبانے کی کوشش” تھے۔

آرٹیکل 144 کی خلاف ورزی

اسلام آباد پولیس نے پی ٹی آئی کے سربراہ عمران خان اور پارٹی کے دیگر رہنماؤں پر اسلام آباد میں جلسے کے دوران دفعہ 144 کی خلاف ورزی کا الزام عائد کیا۔

اسسٹنٹ سب انسپکٹر (اے ایس آئی) محمد انور کی جانب سے درج کرائی گئی فرسٹ انفارمیشن رپورٹ (ایف آئی آر) کے مطابق وفاقی دارالحکومت کی پولیس نے لاؤڈ اسپیکر کے ذریعے شہر میں دفعہ 144 کے نفاذ کا اعلان کیا تاہم ریلی جاری رہی۔

مزید پڑھ اے ٹی سی نے دہشت گردی کیس میں عمران کی یکم ستمبر تک ضمانت منظور کرلی

شکایت میں الزام لگایا گیا ہے کہ "عمران خان کے حکم پر” اسلام آباد کے زیرو پوائنٹ انٹرچینج پر ایک ہزار سے زیادہ پی ٹی آئی کے حامی جمع ہوئے اور پارٹی کا سامان اٹھائے ہوئے تھے جن میں جھنڈے بھی شامل تھے۔

"انہوں نے گل کو آزاد کرنے کے لیے نعرے لگائے،” اے ایس آئی اور پی ٹی آئی کے حامیوں نے کہا جنہوں نے سڑک بلاک کی اور رہائشیوں کو "دھمکیاں اور دھمکیاں” دیں۔

انہوں نے کہا کہ "ریلی کے شرکاء نے لاؤڈ اسپیکر کا استعمال کیا اور حکومت مخالف نعرے لگائے۔”

ان کے مطابق ریلی نے شہریوں اور مسافروں کے روزمرہ کے کاموں کو نقصان پہنچایا۔


ِ
#آرٹیکل #کی #خلاف #ورزی #کیس #میں #اسد #عمر #کی #عبوری #ضمانت #منظور

(شہ سرخی کے علاوہ، اس کہانی کو مری نیوز کے عملے نے ایڈٹ نہیں کیا ہے اور یہ خبر ایک فیڈ سے شائع کیا گیا ہے۔)

جواب دیں